شخصیت پرستی

میری نظر میں ہماری قوم کا بنیادی مسئلہ یہ ہے کہ ہم اعلی درجہ کے "شخصیت پرست” واقع ہوئے ہیں ۔ہمیں اس بات سے کوئی غرض نہیں کہ کیا صحیح ہے اور کیا غلط ہمیں تو بس اس شخصیت کا دفاع کرنا ہے جسے ہم یا ہمارے باپ دادا اپنا "گڈریا” تسلیم کر چکے ہیں۔
اندھی تقلید نے اس قوم کو اس مقام پر لا کھڑا کیا ہےکہ چاہے بات کھیل کی ہو، مذہب کی ہو یا سیاست کی ، عقل اور دلیل کے مقدس ایوانوں سے فیصلہ لینے کی بجائے ہم ہمیشہ جذبات اور روایات کے فرسودہ احکامات کی پیروی کو ترجیح دیتے ہیں۔کوئی عمران کا جیالا ہے تو کوئی  نواز کا ،کسی کو مشرف کا درد ستاتا ہے تو کوئی الطاف بھائی کو دیوتا مانتا ہے۔کسی کو آج تک بھٹو یاد آتا ہے تو کوئی مرد حق کے نعرے لگاتا ہے۔حتی کہ اگر آپ ابھی  آفریدی اور مصباح کی بات چھیڑ دیں تو یہ قوم لڑ لڑ کر ایک دوسرے کو لہو لہان کر دے۔کوئی یہ نہیں جانتا کہ ان شخصیات نے جو کارنامے کیے وہ کیا ہیں اور یہ کہ جس کی مخالفت میں آپ اخلاقیات تک کو بھلا بیٹھے ہیں وہ بھی پاکستان کی خاطر لڑا ہے۔ اگر آپ اس  کے کسی ایک طرز عمل سے اختلاف کر رہے ہیں تو اس کی اچھائی کو تسلیم بھی کریں۔

یہ بات آخر ہم کیوں نہیں سمجھ  پا رہے کہ اس دنیا میں فرشتے نہیں بستے،آپ کا مخالف بھِی "سچ” بول سکتا ہے اور آپ کا لیڈر بھی "جھوٹ” کا سہارا لے سکتا ہے۔ہم طالبان کو "شدت پسند” قرار دیتے ہیں لیکن افسوس کہ خود اپنی ذات میں چھپے بیٹھے شدت پسند کو کوئی نہیں پہچان پا رہا۔ جمہوریت محض "ووٹ” ڈالنے کا نام نہیں ، بلکہ قدامت پرستی اور شخصیت پرستی کی انسانیت سوز روایات کو توڑ ڈالنے کا نام ہے۔

انقلاب خون خرابے کانام نہیں بلکہ انقلاب قلب و دماغ کی تبدیلی کا نام ہے ۔۔۔ ہنگامے سے شاید حکومت کا تختہ تو الٹ جا ئے ، جو کہ ضروری بھی معلوم ہوتا ہے، لیکن اس کے بعد کا منظر کیا ہوگا؟ مان لیا کہ ہم نے "لا” کی منزل تو طے کر لی لیکن "الا” کی خبر کسے ہے؟ "الا” کو پہچانے بغیر ہم یقینا تباہ و برباد ہو جائیں گے۔
حقیقی انقلاب اور تبدیلی تبھی ممکن ہوگی جب ہمارے قلب و دماغ سے شخصیت پرستی کے آسیب ذدہ محلات کا صفایا ہو جائے گا۔ یہ محض خواب خیالی نہیں ،ایسا انقالاب  محمد( ص) کے ہاتھوں  شرمندہ تعبیر ہوا اور دنیا نے اسے تسلیم کیا۔ اس بات کا اعتراف کسے نہیں کہ مکہ کے خانہ بدوش ، قلب و دماغ کی تبدیلی کے باعث خدا ئے واحد کا پرچم لے کر اٹھے اور پوری دنیا پر چھا گئے۔ اس فردوس گم گشتہ کو ہمیں ڈھونڈ لانا ہوگا ۔اور ایسا تبھی ممکن ہے جب ہم اپنے آپ کو شخصیت پرستی سے آزاد کریں اور اپنے کردار اور خیالات کو قرآن کے قالب میں ڈھالیں۔

از

طہ لیل

ہنگو سے ماسکو

آج اتوار کا دن تھا ۔ سکول سے چھٹی کے باعث بچوں کے چہروں پر خوشی و مسرت کے جذبات واضح تھے۔اگر آپ بھی اپنے ماضی پر ایک نظر دوڑائیں تو سکول کےزمانے میں اتوار کا دن یقینا٘ آپ کے لیے بھی باعث مسرت رہا ہوگا۔اوپر سے سردیوں کی میٹھی میٹھی دھوپ میں چھٹی کا مزہ کچھ اور ہی دوبالا ہوگیا تھا۔چند بچے آپس میں اٹکھیلیاں کرتے ہنستے کھیلتے جا رہے تھے ۔ وہ اس سہانے دن کا بھرپور فائدہ آٹھا نا چاہتے تھے۔وہ اسی سوچ میں مگن تھے کہ آخر کون سا کھیل کھیلا جائے۔اسی اثنا میں ان میں سے ایک کی  نظر دور پڑے ایک کھلونے پر پڑی۔انسانی بچوں کی جبلت میں یہ بات شامل ہے کہ ہر شے کی تحقیق کی جائے۔اس بچے نے اپنے دوستوں کو آواز لگائی سب اس کی طرف متوجہ ہوئے۔اتوار کا دن ،سہانا موسم، کھیل کود کی چاہت اور کھیلنے کا سامان سامنے ۔۔۔ایک معصوم کے لیے بھلا اس سے بہتر اور کیا ہو سکتا تھا ۔ وہ سب اس کھلونے کی طرف لپکے پر وہ بد نصیب یہ نہ جانتےتھے کہ ان کی قسمت میں کھیل کود نہیں لکھا تھا ۔ اس بے حس قوم نے تو ان کو خون کی ہولی کے لیے پیش کر دیا تھا ۔ ایک اور دھماکہ اور ایک بار پھر بد نصیب پاکستانی ماوں کی گودیں اجڑ گئیں۔۔۔۔ ان معصوموں کی ہنسی ، چیخوں اور آہ وزاری میں بدل گئی۔

Image

میرے لیے یہ خبر کچھ زیادہ معنی خیز نہ تھی۔ صیح سویرے ” اموات نامہ ” سن کر افسوس کرنا تو اب ایک معمول بن چکا ہے۔ پاکستانی قوم اب صدمات برداشت کر کر کے ، صدمے کی کیفیت ہی بھلا بیٹھی ہے۔کبھی بوڑھا تو کبھی جوان روزانہ چار پانچ کا جنازہ اٹھانا تو اب جیسے روایت ہے۔میں بھی خبرنامہ سن کر معمولات زندگی میں الجھ گیا۔ اس دوران مزمتی اور تعزیتی بیانات کی بوچھاڑ جاری رہی۔سب نے دہشتگردوں کو خوب سنائیں اور انہیں برباد کرنے کی دھمکیاں دیتے رہے۔

شام ہوئی۔میں معمول کے مطابق اپنے والد صاحب کے ساتھ ۸ بجے کا خبرنامہ سننے بیٹھا۔ چند ایک  خبروں کے بعد ، جن میں آئی سی سی کے قوانین میں تبدیلی کی خبر بھی شامل تھی ، آخر ان معصوموں کی خبر کی باری آئی۔ میں ایک بار پھر استغفار کہ کر آگے بڑھنا چاہتا تھا پر اگلی ہی خبر نے میرے احساسات کو جھنجوڑ کر رکھ  دیا۔ میری آنکھوں میں بلا ساختہ آنسو آگئے اور میں اسی سوچ میں کمرے سے باہر چلا گیا ۔ میں اپنے جذبات پر قابو رکھنا چاہتا تھا پر دل کی بات قلم کے رستے اس کورے کاغذ پر آگئی۔خبر یہ تھی کہ ماسکو میں بچوں کے لیے  تفریحی میلہ منعقد کیا گیا جس میں بچوں نے برف کے رنگ برنگے مجسمے  بنا کر خوب موج مستی کی ۔

اب ذرا  ایک لمحے کے لیے ٹھہریے اور سوچیئے۔۔۔۔۔۔ ماسکو کے بچوں کے لیے بھی یہ وہی اتوار کا دن تھا، وہی موسم ، وہی کھیلنے کی چاہ ، وہی دوستوں کے  ساتھ ہنسی مذاق ، وہی معصومیت ، پر انجام یکسر مختلف۔۔۔۔ وہ ماسکو کے پچے تھے اور یہ ہنگو کے۔ ان کے بڑوں نے ان کے لیے میلہ لگایا اور ہم نے اپنے بچوں کو بم سے  کھیلنے کے  لیے چھوڑ دیا۔ وہ اپنے گھروں میں خوشیاں اور محبتیں لے گئے اور ہم اپنے بچوں کے لا شے لے آئے۔کیا ہمارے بچوں کا حق یہ نہ تھا کہ ان کو بھی ہنسی خوشی جینے دیا جاتا ؟؟؟

Image

پر قابل غور بات تو یہ ہے کہ ہم تو شریعت کے نفاذ کے لیے نکلے ہیں جبکہ ماسکو والے تو کافرانہ نظام کے  پیروکار ہیں ۔ ان لوگوں سے سوال یہ ہے کہ کیا بچوں کو مار کر نظام محمدی (ص) نافذ کیا جائے گا؟ میں اسلامی تاریخ کے اوراق پلٹ کر دیکھتا ہوں تو مجھے فتح مکہ نظر آتی ہے ، فتح روم و فارس نظر آتی ہے، دنیا پر مسلمانوں کا عروج و غلبہ نظر آتا ہے ۔ پر کہیں بھی "کھلونا بم” نظر نہیں آتا۔ کوئی آئے اور مجھ جیسے کافر کو بتائے کہ کب اور کس زمانے میں شریعت محمدی (ص) معصوموں کی جان لے کر نافذ ہوئی ہے؟ وہ ماسکووالے کافر ہی سہی پر اسلامی اقدار پر چلنے والے تو  وہ ہیں ۔ قرآن نے ہمیں جو درس امن دیا ہے اس پر عمل پیرا تو وہ نظر آتے ہیں۔ تم لوگ تو مسلمان کیا انسان کہلانے کے قابل بھی نہیں اگر اتنا ہی شوق ہے اسلام کے نفاذ کا تو پہلے خود کو تو مسلمان کرو۔۔ کیا تم نہیں جانتے کہ ” جو رحم نہیں کرتا ، اس پر رحم نہیں کیا جائے گا”۔ کیا یہ بات تمہارے علم میں نہیں کہ ” دین میں کوئی جبر نہیں”۔ اگر جبرا٘ ہی ایمان پھیلانا مقصود ہوتا تو خدا خود لوگوں کے دلوں میں ایمان ڈال دیتا پر خدا نے انسان کو خود یہ حق و اختیار دیا ہے کہ وہ اپنی مرضی سے صحیح یا غلط رستہ اختیار کرے ۔ پھر بھلا ہم کون ہوتے ہیں انسانوں سے یہ حق و اختیار چھیننے والے؟؟

ایسے ظالموں کو سبق سکھانے کے لیے قوم کو متحد ہونا پڑتا ہے پر ہماری قوم تو ابھی تک یہ فیصلہ ہی نہیں کر پائی کہ یہ جنگ ہماری ہے بھی یا نہیں ؟ یہ جنگ جس کی بھی تھی پر اب ہم اس میں مر رہے ہیں ۔ آخر کب تک ہم اسی طرح لاشیں ا ٹھا ئیں گے؟ آخر کب وہ وقت آئے گا جب ہنگو کے بچے بھی ماسکو کے بچوں کی طرح  آزادی سے اپنی زندگی جی پا ئیں گے؟ دس سال کی ذلت  آمیز جنگ کے بعد بھی اگر ہم اپنی قوم کی حفاظت کرنے کے قابل نہیں تو بہتر یہی ہے کہ سب پاکستانیوں کو ایک ہی بار ختم کر دیا جائے ۔۔۔ روز گھٹ گھٹ کر جینے سے تو یہی بہتر ہے ۔

میرے بے معنی الفاظ اور بے ربط جملے اس بات کے عکاس ہیں کہ اب ہم لاشیں اٹھا ٹھا کر تھک چکے ہیں۔ اب ہمارے بازوں میں اور لاشیں اٹھا نے کی سکت باقی نہیں ۔۔ خدارا پاکستانیوں پر رحم کرو ۔ مذاکرات کرو یا آپریشن پر اس سب کو اب  ختم کرو ۔ ہمارے بچوں کو جینے دو ۔ آپس میں الجھنے کی بجائے اپنے دشمن کا مل کر خاتمہ کرو ۔آپس کا اتحاد ہی امن کا ضامن ہے۔۔۔۔۔۔۔

وسلام

طہ لیل

قومی غیرت کا جنازہ ہے ، ذرا دھوم سے نکلے

پاک بھارت وزرائےاعظم کی ملاقات کے امکانات کیا ظاہر ہوئے ہمارے میڈیا کی تو جیسے چاندی ہو گئی۔برسوں سے "امن کی آشا” کا نعرہ لگانے والے بھی پورے جوش و خروش سے میدان میں اترے۔ایسا سماء باندھا گیا کہ گویا "اکھنڈ بھارت” کے معاہدے پر دستخط ہونے جا رہے ہیں۔پر بھارتی وزیراعظم کی شعلہ بیانیوں نے پہلے ہی واضح کر دیا کہ یہ ملاقات اول تو وقوع پزیر ہی نہ ہوگی اور اگر امریکہ نے  ایٹمی پلانٹ کے بدلے ایک ملاقات مانگی تو ملاقات کے نام پر محض ایک فوٹو شوٹ پاکستان کو بھیک کی صورت میں دے دیا جائے گا۔امریکی دباواور جنرل اسمبلی میں "مستقل نشست” کے حصول کے پیش نظر بھارت ملاقات کرنے پر رضا مند ہوا۔

Image

ادھر پاکستانی وزیراعظم خوشی سے پھولے نہ سماتے تھے۔بھاگ کر ملاقات کرنے پہنچے۔پر دوران ملاقات نواز شریف کسی ہارے ہوئے ، پست و شکستہ ملک کی نمائندگی کرتے نظر آئے۔ایسا لگا کہ جیسے یہ تسلیم کر لیا گیا ہو کہ ہر بات کا ذمہ دار پاکستان ہے اور یہ کہ پاکستان بھارت سے دوستی کے لیے مرے جا رھا ہے ۔نواز خود بھی بوکھلائے ہوئے لگے۔ ان کا اچانک بھارتی وزراء سے مصافحہ کرنا ۔ منموہن سے بلا ارادہ ٹکرا جانا حواس باختگی کی واضح دلیل تھی۔

ملاقات کا بھلا کیا نتیجہ نکلنا تھا کہ جب بھارتی رہنما پہلے ہی نواز کو ان کی اوقات دکھانے کی باتیں کر چکے تھے۔خیر رسمی سلام دعا کے بعد ایک دوسرے کو گھر آنے کی دعوتیں دی گئیں جن کو دونوں رہنماوں نے قبول کیا اور یوں برصغیر کی دو بڑی طاقتیں ایک مرتبہ پھر بے نتیجہ اپنے اپنے گھر ہو لیں۔ اس ملاقات  کا پاک بھارت تعلقات پر ایسا کیا جادوئی اثر متوقع تھا کہ نواز اس کے لیے مرے جا رہے تھےیہ سمجھ سے بالا تر ہے۔ بھارت میں چند ماہ کے بعد نئی حکومت آنے والی ہے۔ میاں صاحب بھی اس امر سے بخوبی واقف  ہیں کہ نئی حکومت کے ساتھ  بات چیت نئے  سرے سے شروع کرنا ییقینی ہے۔ایسے میں بھارتی وزیراعظم سے "زبردستی "ملاقات امریکی دباو کا نتیجہ دکھائی دیتی ہے۔کیوں کہ امریکہ شام پر حملے کے لیے راہ ہموار کرنے کی کوششوں میں مصروف ہے ایسے میں دو ایٹمی ممالک کے درمیان کشیدگی اس کے عزائم کی راہ میں رکاوٹ کھڑی کر سکتی ہے۔ساتھ ہی ساتھ افغانستان اور چین کے معاملے میں بھی اسے پاکستان اور بھارت دونوں کی مدد درکار ہے۔

گو کہ ملاقات بےنتیجہ رہی پر بھارت نے پوائنٹ سکورنگ کا موقع ہاتھ سے جانے نہ دیااور پاکستان پر خوب کیچڑ اچھالا حتی کہ جنرل اسمبلی کے اجلاس میں پوری دنیا کے سامنے بلا جھجک پاکستان کو دہشت گردوں کا سرپرست قرار دے دیا گیا۔ادھر کشمیر کو اپنا "اٹوٹ انگ” قرار دے کر جنرل اسمبلی کی قراردادوں کی دھجیاں بکھیر دی گئیں۔پر ہماری قومی غیرت کو سلام کہ پھر بھی بھارت کو بے نقاب کرنے کے لیے منہ سے ایک لفظ تک نہ پھوٹے۔

Image

ادھر بھارتی میڈیا ہمشہ کی طرح پاکستان کی خلاف سر گرم دکھائی دیا۔”جیو” نے خصوصی نشریات کا بندوبست کر رکھا تھا ۔ "امن کی آشا”نامی پروگرام نے پوری قوم پر واضح کر دیا کہ بھارت ہم سے کس حد تک نفرت کرتا ہے۔”نفرت کی بھاشا” کے استعمال نے ان شکوک کو دھو ڈالا کہ بھارتی عوام پاکستان سے دوستی کی خواہش مند ہے۔بھارتی اینکر جان بوجھ کر اقلیتوں پر مظالم کی باتیں کر کے پاکستان کے زخموں پر نمک چھڑکتے رہے۔جیو کے منہ پر بھی خوب تماچے مارے گئے۔آخر بات یہاں تک آن پہنچی کہ بھارتی چینل نے بات کرنا ہی پسند نہ کی اور پروگرام کا بائیکاٹ کر دیا۔ اور یوں خود "جیو” کی زبان سے یہ الفاظ سنائی دیے کہ "بھارت پاکستان کو برداشت نہیں کر سکتا”۔ان الفاظ نے ان لاکھون پاکستانیوں کے ذہنوں کو بھی جھنجوڑ ڈالا جو آج کل لبرل ازم کا شکار ہیں اور ” اکھنڈ بھارت” کے خواب دیکھتے ہیں ۔جو لوگ ایک ٹی وی پروگرام میں اکھٹے نہیں ہو سکتے وہ بھلا دوستی کے رشتے  میں کیسے  بندہ سکتے ہیں ؟

پر کیا کریں ہم اپنے بھولے پاکستانی بھائیوں کا بھارت روزانہ بلوچستان میں "امن کا تماشا” لگاتا ہے ۔بھارت کی پانی کی اجارہ داری کسی سے ڈھکی چھپی نہیں ۔ اور  تو اور اب دریائے کابل پر بھی بند باندھنے کے لیے بھارت  افغانستان کو فنڈنگ کر رھا ہے۔غرض بھارت پر لحاظ سے پاکستان کو مفلوج کرنے کے درپے ہے۔پر ہمیں تو "امن کی آشا” ستائے جا رہی ہے۔بھارتی ریاستی دہشت گردی سے کون واقف نہیں ؟ اب تو ان کے اعلی فوجی افسران کھلے عام اس کا اعتراف کر چکے ہیں پر جنرل اسمبلی میں تو جیسے یماری زبان پر تالے پڑ جاتے  ہیں ۔اور تالے کیوں نہ پڑیں،جب زلزلہ زدگان کو دھوپ اور گرمی میں چھوڑ کر نیویارک پیلس کے ٹھنڈے کمروں  میں اپنے بد ترین دشمن سے "۲۱” سیکنڈ تک مصافحہ کیا جائے گا اور دوستی کے گیت گائے جائیں گے تو بلاشبہ قومی غیرت کا جنازہ بڑی دھوم سے نکلے گا۔

وسلام

طہ لیل

Image

میوزیکل کنسرٹس

چند دن پہلے پنجاب اسمبلی نے تعلیمی اداروں میں ”قابلِ اعتراض“ میوزیکل کنسرٹس پر پابندی کی قرارداد منطور کی،مگر شاید کسی کو یہ معلوم نہ تھا کہ یہ معاملہ اتنا سنگینی اختیار کر جائے گا۔اور ملک میں ایک نئی بحث کا آغاز ہو جائے گا۔اب اپوزیشن جماعتوں نے میوزیکل کنسرٹ کے حق میں دلائل دینے شروع کر دیے ہیں جبکہ پنجاب حکومت نے بھی اپنی قراردادکو صحیح قرار دینے میں کوئی کسر اٹھا نہیں رکھی ۔حکومت نے  ” یوٹرن ”  لیتے ہوئے کہا ہے کہ ہم نے صرف قابل ِاعتراض کنسرٹس پر پابندی لگائی ہے۔۔۔۔ لیکن اصل مسئلہ وہیں کا وہیں کھڑا ہے۔ سوال یہ ہے کہ آخر ”قابلِ ا عتراض“کی تعریف کیا ہے؟؟قارئین اس بات سے بخوبی واقف ہیں کہ ہمارا ملک اسلامی جمہوریہ پاکستان ہے۔لہذا ضروری معلوم ہوتا ہے کہ ہم اس معاملے میں اسلام اور جمہوریت دونوں کے تقاضوں کو پورا کریں،اگرچہ ایساکرنا موجودہ صورت حال میں ممکن نظر نہیں آتا۔۔
پہلے جمہوریت کی طرف آئیے۔جمہوریت کے عام الفاظ میں معنی ہیں  ”جمہور کی حکومت“ یعنی جمہوریت کی رو سے ہر وہ کام جائز قرار پائے گا جس کے حق میں زیادہ لوگ (جمہور)ووٹ دیں گے۔ مثلاََ اگر کل یہ قرار داد پیش کر دی جائے کہ شراب ملک میں جائز ہونی چاہیئے اور اسمبلی میں موجود سو(۱۰۰) ممبران میں سے اکاون(۵۱) اس کے حق میں ووٹ ڈال دیں تو جمہوریت کی رو سے یہ قانون بن جائے گا اور عین مطابق ِآئین ہوگا۔یعنی اسلام کی رو سے غلط اور حرام قرار دیے جانے کے باوجود شراب حلال قرار پا جائے گی۔اب سوال ان جمہوریت پسندوں سے ہے جو کہتے ہیں کہ کالجوں میں کنسرٹ پر پابندی ہونی چاہیے،اور ان کا نکتہ یہ ہے کہ کنسرٹ اسلامی روایات کے خلاف ہیں۔ان سے یہ پوچھا جائے کہ اگر کل اپوزیشن کنسرٹ کے حق میں قرارداد منظور کروا لے تو آپ اسے کیا کہیں گے؟؟؟؟جمہوری یا اسلامی؟؟؟؟لہذاجمہوریت کی رو سے تو عوام یہ فیصلہ کریں گے کہ وہ کس چیز کو قابلِ اعتراض سمجھتے ہیں؟؟
عوام کے اس ضمن میں دو گروہ سامنے آتے ہیں۔۔۔ایک وہ جو مغرب زدہ ذہنیت کے حامل ہیں۔آج کل ان کا اثر و رسوخ بڑھتا جا رہا ہے۔ان کے مطابق یہ اکیسویں صدی ہے۔اور پاکستان ایک جمہوری ملک ہے۔یہاں کسی قسم کی پابندی کا نام لینا بھی گناہ ہے۔بلکہ ان کے مطابق توان کنسرٹس کو اور بھی فروغ دینا چاہیے۔جب ان سے سوال کیا جاتا ہے کہ کیا بے حیائی کی بھی اجازت ہونی چاہیے؟ تو کہتے ہیں کہ بے حیائی کہاں ہے؟؟؟؟ہمیں تو نظر نہیں آتی۔۔۔۔یہ تو ہماری ثقافت ہے۔اس کا بچاؤ اور فروغ ہمارا حق ہے۔۔۔۔ان لبرل پاکستانیوں سے پوچھا جائے کہ یہ کس ثقافت کی بات کر رہے ہیں؟؟؟ان کنسرٹس میں نہ تو پاکستانی(برِصغیر)کی ثقافت نظر آتی ہے اور نہ ہی اسلامی ثقافت۔۔۔۔ان کنسرٹس میں لڑکے لڑکیاں انگریزی گانوں پر رقص کرتے ہیں۔۔۔انہی میں انگریزی موسیقی بجائی جاتی ہے۔۔۔ساتھ ہی ان میں اخلا قیات کی خوب دھجیاں بکھیری جاتی ہیں۔”منی بدنام ہوئی“،”چھنوں کی آنکھ میں اک نشہ ہے“اور ”کم پے گیا ہے تھوڑی دیر دا“  وغیرہ جیسے بازاری گانے نہ تو اسلامی ثقافت کی نمائندگی کرتے ہیں نہ ہی پاکستانی ثقافت کی۔۔۔کیا آپ پاکستانی نسل کو بھی وہی کچھ کرتے ہوئے دیکھنا چاہتے ہیں جو گذشتہ برس لندن کے لبرل نوجوانوں نے کیا؟؟؟شاید آپ کی نظر سے برطانوی وزیرِاعظم کا وہ بیان نہیں گزرا جس میں انہوں نے لندن کے فسادات کی تمام تر ذمہ داری نوجوانوں کے والدین پر عائد کی کہ انہوں نے اپنی اولاد کی صحیح تربیت نہیں کی اور انہیں بے جا آزادی دی۔آج مغرب خود مذہب کی طرف واپس آ رہا ہے کیوں کہ وہ بے روک ٹوک،مادر پدر آزادی کے نتائج دیکھ چکا ہے۔

concertspic

اب دوسرے گروہ سے سوال کیا جاتا ہے کہ قابلِ اعتراض کیا ہے؟؟؟ ان کا جواب بھی عجیب ہے۔ ان کے مطابق ہر قسم کی موسیقی حرام ہے۔ اسلام میں موسیقی کا تصو ر بھی جائز نہیں۔اور پاکستانی ثقافت بھی کسی کنسرٹ کی اجازت نہیں دیتی۔۔لہٰذا، ہر کنسرٹ پر پابندی لگا دو۔اگر ان سے یہ سوال کیا جائے کہ رسول اللہﷺنے تو ایک قبیلے کو مسجدنبوی (ﷺ) میں تماشہ (بعض کے مطابق رقص) پیش کرنے کی اجازت دی تھی(تفہیم القرآن از مولانا مودودیؒ۔جلد سوم۔صفحہ نمبر384۔سورہ النور)بشرطیکہ کوئی بے حیائی اور شرک کی بات نہ ہو؟؟؟توان کا جواب خاموشی کے سوا کچھ نہیں ہوتا۔۔۔ساتھ ہی ان کنسرٹس میں کلام اقبال وفیض بھی گایا جاتا ہے۔۔۔”خودی کا سرِ نہاں“ ،”امیدِ سحر کی بات سنو“ اور ”زمانے کے انداز بدلے گئے“جیسے گانے (کلام) نہ تو اسلام کے خلاف ہیں نہ ہی پاکستان کے۔بلکہ یہی وہ گانے ہیں جن کو سن کر آج بھی جذبہ ء ایمانی جاگ اٹھتا ہے اور خون جوش مارنے لگتا ہے۔دوسری طرف یہی وہ کنسرٹس ہیں جن میں جمع ہونے والا پیسہ سیلاب زدگان اور دیگر غرباء تک پہنچایا جاتا ہے۔انہی سے غریبوں کے لیے بستیاں بسائی جا تی ہیں۔ ہمارے سامنے سمیع یوسف کی مثال ہے۔سمیع یوسف آج کل کا مشہور نعت خواں ہے۔وہ مغربی لباس پہن کر مغربی موسیقی میں نعتوں کے کنسرٹس کرتا ہے۔ اس کی نعتیں اس وقت کے بالی وڈ کے گانوں سے زیا دہ مشہور ہیں۔اس نے نوجوان نسل میں نعتوں کا جو ذوق و شوق پیدا کیا ہے وہ قابلِ تعریف ہے۔ اگر آج آپ دیگر کنسرٹس کے ساتھ ان کنسرٹس پر بھی پابندی لگا دیں گے تو نوجوان نسل تفریح کے لیے جو گھٹیا ذرائع استعمال کرے گی ان کا آپ بھی بخوبی اندازہ لگاسکتے ہیں۔

mulla

ہم نے دیکھا کہ یہ دونوں گروہ انتہا پسندی کا شکار ہیں۔اس کی وجہ شاید ہمارے ملکی حالات ہیں۔یہ ہماری نفسیات بن چکی ہے کہ ہر شے کی یا تو مکمل حمایت کرو یا مکمل مخالفت۔حالانکہ اسلام ہمیں اعتدال پسندی کا حکم دیتا ہے۔مگر بد قسمتی سے آج اسلام کا نام لینے والے کو شدت پسند قرار دے دیا جاتا ہے۔جیسا کہ پہلے لکھا جا چکا ہے کہ یہ اسلامی جمہوریہ پاکستان ہے۔اب اسلام اس ضمن میں ہمیں کیا حکم دیتا ہے ذرا اس طرف آئیے۔ اسلام ہردور،ہر ملک اور ہر علاقے کے لیے آیا ہے۔یہ دین تاقیامت قائم رہنا ہے لہٰذا، اس میں قدامت پسندی کی کوئی گنجائش ہی نہیں۔آپ خود تصور کیجئے کہ ایک نظام جس نے تا قیامت رہنا ہے وہ کیسے قدامت پسند ہو سکتا ہے؟؟؟اسلام کا اصول واضح ہے۔اسلام آپ کی حدود مقرر کرتا ہے۔یوں سمجھئے کہ ایک دائرہ آپ کے گرد کھینچ دیا گیا ہے۔اب آپ کو اجازت ہے کہ اپنے زمانے اور علاقے کی مناسبت سے اس دائرے کے اندر رہتے ہوئے اپنے فیصلے کریں۔اگر آپ کسی شے کو اس دائرے سے باہر دیکھتے ہیں تو بلا جھجھک اس پر پابندی لگا دیں۔اگر ہم موسیقی کے معاملے کو اسلام کی نظر سے دیکھیں تو ایک واقعہ اس تمام بحث کو سمیٹ دیتا ہے اور ”قابلِ اعتراض“کی واضح تعریف کرتا ہے،واقعہ کچھ یوں ہے کہ:۔
ایک مرتبہ مسلمانوں کے قافلے کے ساتھ جس میں حضرت عمرؓ،حضرت عثمانؓ اور حضرت ابنِ عباسؓ بھی تھے،چرواہوں کی ایک ٹولی آملی۔شام ہوئی تو چرواہوں نے رباح فہری سے، جو مشہور گانے والا تھا،حدی خوانی کی فرمائش کی۔رباح نے یہ کہتے ہوئے انکار کر دیا کہ قافلے کے ساتھ حضرت عمر ؓ بھی ہیں۔انہوں نے کہا کہ تم شروع کرو۔اگر حضرت عمرؓ نے اعتراض کیا تو بند کر دینا۔اس نے شروع کیا تو حضرت عمر ؓ نے کوئی اعتراض نہ کیا۔بلکہ سن کر خوش ہوئے۔جب صبح ہوئی،تو رباح سے کہا کہ اب بس کرو۔ذکرِالٰہی کا وقت آگیا ہے۔دوسری شب چرواہوں نے رباح سے ایک اور گانے کی فرمائش کی جو حدی خوانوں ہی کے انداز کا تھا۔اس سے بھی حضرت عمرؓ اسی طرح کیف اندوز ہوتے رہے۔تیسری شب انہوں نے کچھ بازاری قسم کے گانے کی فرمائش کی تو اسے سن کر آپؓ نے رباح سے کہا کہ یہ نہیں بھائی!۔اس سے دلوں میں انقباض اور کدورت پیدا ہوتی ہے۔
اس واقعہ سے ”قابلِ اعتراض“ کامسئلہ حل ہو جاتا ہے پس اسلام بے حیائی،فحاشی اور شرک سے روکتا ہے۔اگر کسی کنسرٹ میں ان میں سے ایک چیز بھی پیش کی جاتی ہے تو اس پر پابندی ہو،جبکہ ہر وہ کنسرٹ جو ان سے پاک ہو اسکی نہ صرف حمایت کی جائے بلکہ اس کو حکومت کی طرف سے فنڈز بھی مہیا کیے جائیں تاکہ صحیح اسلامی ثقافت کی حفاظت کی جا سکے۔صرف کنسرٹ ہی نہیں بلکہ فحا شی پھیلانے والے ٹی وی چینلز پر بھی نظر رکھی جائے۔آج آپ کسی بھی نیوز چینل کا خبر نامہ سن لیں، اس میں آخری خبر اکثر ایسی ہوتی ہے جسے آپ اپنے اہلِ خانہ کے ساتھ نہیں دیکھ سکتے۔اگر نیوز چینلز کا یہ حال ہے تو دوسری طرف انٹرٹینمنٹ چینلز آئے دن انڈیا کے ایوارڈ شوز دکھا تے ہیں جن میں فحاشی اپنے عروج پر دکھائی جاتی ہے۔ اب یہ ہمارے سیاست دانوں کا کام ہے کہ وہ ”کنٹرولڈ ڈیموکریسی“ پر عمل کریں یعنی جمہوریت کو قرآن کے تابع کریں ورنہ کل کو پاکستان میں بھی ہم جنسوں کی شادیوں اور شراب کو حلال قرار دلوانے کے لیے قرار دادیں آنے لگیں گی اور نوجوانوں کو قابو کرنا ناممکن ہوجائے گا۔مگر اس ضمن میں اقبال ؒ کا یہ شعر آپ پر سیاست دانوں  اور دیگر گروہوں کی نیتیں اور ہمارا یہ مضمون لکھنے کامقصد ظاہر کر دے گا۔

اگر چہ بت ہیں جماعت کی آستینوں میں                مجھے ہے حکمِ اذاں  لا   اِلہَ     اِلا اللہ                                        

mullahandpolititions

   تحریر    ملک  طٰہ ٰ  منظور لیل